کراچی میں این آئی سی وی ڈی کی طرز پر فالج کا اسپتال قائم کیا جائے، ماہرین

کراچی میں این آئی سی وی ڈی کی طرز پر فالج کا اسپتال قائم کیا جائے، ماہرین

پاکستان میں روزانہ ایک ہزار افراد فالج کے حملے کا شکار ہو رہے ہیں جن میں سے تقریباً چار سو افراد موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں جبکہ دو سو سے تین سو افراد روزانہ مستقل معذوری کا شکار ہو رہے ہیں۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ کراچی جیسے بڑے شہر میں قومی ادارہ برائے امراض قلب کی طرز پر فالج کے علاج کا اسپتال قائم کیا جائے۔

ان خیالات کا اظہار پاکستان اسٹروک سوسائٹی کے جنرل سیکریٹری ڈاکٹر روی شنکر، پاکستان سوسائٹی آف نیورولوجی کے سابق صدر پروفیسر محمد واسع، پاکستان سوسائٹی آف نیورولوجی کے رکن ڈاکٹر بشیر سومرو اور پاکستان اسٹروک سوسائٹی کے نائب صدر ڈاکٹر عبد المالک نے کراچی پریس کلب میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

ماہرین کا مزید کہنا ہے کہ ملک کے تمام بڑے اور ضلعی اسپتالوں میں فالج کے علاج کے مراکز قائم کیے جائیں اور ملیریا، ٹی بی اور ایچ آئی وی ایڈز کی طرز پر قومی اور صوبائی سطح پر فالج کے مرض سے بچاؤ کے پروگرامز شروع کیے جائیں۔

پروفیسر ڈاکٹر محمد واسع نے اس موقع پر بتایا کہ کہ پاکستان میں ہر ایک لاکھ افراد میں سے 12سو افراد فالج سے متاثر ہو رہے ہیں، 15 سال پہلے یہ تعداد محض ڈھائی سو تھی، پاکستان میں روزانہ فالج کے نتیجے میں 400 افراد زندگی کی بازی ہار جاتے ہیں، کورونا وائرس کے بعد مارچ سے اب تک فالج سے متاثرہ افراد کی تعداد میں اضافہ ہو گیا ہے۔

انھوں نے کہا کہ صوبائی حکومتوں کو فالج کی بیماری پر قابو پانے کے لیے اپنا کردار ادا کرنا ہوگا، ضلعی اسپتالوں میں فالج یونٹس قائم کرنے ہوں گے، اس حوالے سے ہم حکومت، ہیومن ریسورس اور عملے کو تربیت دینے کے لیے تیار ہیں، موبائل ایپلیکیشن کے ذریعے فالج کے مریضوں کا ڈیٹا اکٹھا کر رہے ہیں۔

پروفیسر محمد واسع نے کہا کہ جیسے جیسے ملک میں کرپشن بڑھ رہی ہے ویسے ہی بلکہ اس سے بھی کہیں تیزی سے فالج کی بیماری بڑھتی جا رہی ہے۔  پاکستان میں اتنا نقصان دوسری بیماریاں نہیں کر رہیں جتنا فالج کا مرض کر رہا ہے، 15 سال پہلے سروے کے مطابق پاکستان میں ہر ایک لاکھ افراد میں سے ڈھائی سو افراد فالج کے حملے کا شکار ہو رہے تھے اور اب نئے سروے کے مطابق یہ تعداد 12 سو تک جا پہہنچی ہے۔

کراچی میں این آئی سی وی ڈی کی طرز پر فالج کا اسپتال قائم کیا جائے، ماہرین

اسی طرح پاکستان میں فالج کی بیماری اور اس کے نتیجے میں ہونے والی پیچیدگیوں کے نتیجے میں 400 افراد روزانہ مر جاتے ہیں، اور جو 600 افراد بچ جاتے ہیں ان میں سے بھی ایک چوتھائی زندگی بھر کے لیے معذوری کا شکار ہوجاتے ہیں۔

ڈاکٹر محمد واسع کا کہنا تھا کہ پاکستان کی دس کروڑ آبادی میں فالج کے رسک فیکٹرز موجود ہیں، ان دس کروڑ افراد کو فالج کے حملے سے محفوظ رکھا جا سکتا ہے اگر ایسا نہ کیا تو ان میں سے بڑی تعداد فالج کی بیماری کا شکار ہو سکتی ہے۔

ڈاکٹر بشیر سومرو نے کہا کہ کورونا میں شریانیں تنگ ہونے اور خون جمنے کے امکانات بڑھ جاتے ہیں اور یہی وجہ ہے کہ مارچ سے لے کر اب تک فالج کے مریضوں کی تعداد میں اضافہ ہوگیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ فالج سے متاثرہ افراد کے اہل خانہ کو احتیاط کی ضرورت ہے، یہ نسل در نسل چلنے والی بیماریاں ہیں، اس لیے اہل خانہ کو بھی اپنا چیک اپ کرانے کی ضرورت ہے۔

ڈاکٹر عبد المالک نے کہا کہ دل کی بیماریوں کی طرز پر فالج کی بیماری اور اس کے علاج کے لیے ایک مکمل اسپتال ہونا چاہیے فالج کی بیماری کی شرح بھی دل کی بیماریوں کے برابر ہے۔

انہوں نے کہا کہ عالمی یوم فالج سے متعلق آگہی مہم چلا رہے ہیں اور 20 شہروں میں آگہی کے لیے سرگرمیاں جاری ہیں، 16 شہروں میں مفت اسکریننگ کیمپ منعقد کیے جا رہے ہیں۔

ڈاکٹر روی شنکر نے کہا کہ ہمیں اسٹروک کی علامات کا علم ہونا چاہیے اگر ہمیں علامات کا علم ہوگا تو علاج میں آسانی ہوگی، فالج کے حملے کے نتیجے میں متاثرہ فرد کا جلد سے جلد اسپتال پہنچنا اسے معذوری سے بچا سکتا ہے اور یہ مریض کے زندگی کے لیے ضروری ہے۔

اس موقع پر فالج کے مرض اور اس کی علامات سے آگاہی کے لیے واک منعقد کی گئی جس کے شرکا نے فالج کے مرض کی آگاہی کے لیے بینرز اور پلے کارڈز اٹھا رکھے تھے۔




Source link

اس بارے میں admin

یہ بھی دیکھیں

پاکستان میں 26 نومبر سے تعلیمی ادارے ایک ماہ تک بند رکھنے کا فیصلہ

اسلام آباد —  حکومتِ پاکستان نے ملک میں کرونا وائرس کی دوسری لہر میں تیزی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *