امریکہ کو مکمل بند نہیں ہونا چاہئے، صدر ٹرمپ


امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اشارتاً کہا ہے کہ وہ ملک میں سماجی فاصلے کی پابندی میں کمی کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ انہوں نے پیر کے روز کہا کہ ہمارے ملک کو مکمل طور پر بند نہیں ہونا چاہئیے تھا۔

صدر ٹرمپ نے وائٹ ہاؤس کی کرونا وائرس ٹاسک فورس کی طرف سے میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ امریکا دنیا کی سب سے بڑی معیشت ہے اور ماہرین اس بات کا جائزہ لے رہے ہیں کہ ملک بھر میں شٹ ڈاؤن کو ختم کرنے کے سلسلے میں کیا اقدامات اٹھائے جانے چاہئیں۔

انہوں نے کہا کہ مناسب موقعے پر ملک میں پابندی ختم کر کے آگے بڑھنا ہو گا۔ سیاسی تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ اس بیان سے ظاہر ہوتا ہے کہ صدر ٹرمپ لاک ڈاؤن اور اس سے ہونے والے معاشی اور کاروباری نقصان کا موازنہ کر رہے ہیں۔

صدر ٹرمپ کا یہ بھی کہنا تھا کہ مسلسل جاری اقتصادی بحران کے باعث ہونے والی ہلاکتیں کرونا وائرس سے ہونے والی ہلاکتوں سے کہیں زیادہ ہو سکتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کرونا وائرس سے ہونے والی اموات ایک فیصد سے بھی کم ہیں اور یہ شرح توقعات سے کہیں کم رہی ہے۔

صدر ٹرمپ نے اس عزم کا اظہار کیا کہ امریکا کاروبار کیلئے جلد دوبارہ کھلے گا۔ انہوں نے اس خیال کو رد کر دیا کہ اس کیلئے تین سے چار ماہ لگ سکتے ہیں۔

تاہم، انہوں نے واضح کیا کہ امریکا میں لاک ڈاؤن ختم کرنے کی صورت میں ریاستی گورنروں کو اختیار ہو گا کہ وہ خود مقامی حالات کے مطابق فیصلہ کر سکیں۔


Source link

اس بارے میں admin

یہ بھی دیکھیں

یوم حق خودارادیت کشمیر پر 5جنوری کو کانفرنس ہوگی

ڈنمارک(پ ر) تحریک کشمیر یورپ ڈنمارک کے زیر اہتمام یوم حق خودارادیت کشمیر کے موقع …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *