کورونا سے نمٹنے کی ایرانی ٹاسک فورس کے سربراہ خود وائرس کا شکار


ایران میں حکام نے تصدیق کی ہے کہ کرونا وائرس سے نمٹنے کی ٹاسک فورس کے سربراہ ایرج حریرچی، جنہوں نے ایرانی عوام کوایک روز قبل ٹیلی ویژن پر آکر تسلی دی تھی کہ کورونا سے خوفزدہ نہ ہوں، خود کورونا وائرس کا شکار ہو گئے ہیں۔

ایک روز قبل انہوں نے ایران میں ٹی وی پر نشر ہونے والی نیوز کانفرنس میں صحافیوں کو بتایا تھا کہ ایران میں کورونا وائرس کی روک تھام کی صورتحال مکمل طور پرکنٹرول میں ہے۔

تاہم منگل کے روز ایران کی وزارت صحت کے ترجمان کیانوش جہان پور نے تصدیق کی ہے کہ حریرچی خود کورونا وائرس کا شکار ہو گئے ہیں۔

ایک روز قبل حریرچی کی پریس کانفرنس کور کرنے والے صحافیوں نے نوٹ کیا تھا کہ ایرج حریرچی دوران کانفرنس کھانس رہے تھے اور ان کی سانس تیز چل رہی تھی ۔ تاہم انہوں نے وزارت صحت کے حکام کے ساتھ مشترکہ پریس کانفرنس میں اعلان کیا تھا کہ ایرانی عوام کو فکر کی کوئی ضرورت نہیں، کیونکہ ان کی حکومت ، اپنے عوام کی مدد سے کورونا وائرس کے خلاف جنگ میں کامیاب رہے گی۔ انہوں نے یہ بھی کہا تھا کہ ملک میں صورتحال کنٹرول میں ہے اور یہ بھی کہا تھا کہ قرنطینہ کا طریقہ پتھر کے زمانے میں رائج تھا۔

تاہم منگل کو حریرچی نے خود ایک آن لائن ویڈیو پوسٹ میں اعلان کیا کہ وہ وائرس کا شکار ہیں اور انہوں نے خود کو گھر میں قرنطینہ میں محدود کر لیا ہے۔

ایرانی وزارت صحت کے ترجمان نے منگل کو اس بات کی تصدیق کی اور کہا کہ صورتحال پر بیس مارچ کو جشن نو روز تک اس حد تک قابو پانے کی کوشش کی جائے گی، کہ وائرس مزید نہ پھیلے۔ تاہم ان کا کہنا تھا کہ ہم اتنے سے وقت میں کسی معجزے کا وعدہ نہیں کر سکتے۔

کورونا کا پھیلاو روکنے کے لئے منگل کو متحدہ عرب امارات اور ایران کے درمیان پروازیں عارضی طور پر معطل کر دی گئی ہیں۔ یہ اقدام بحرین میں کورونا وائرس کا شکار سترہ افراد کی تشخیص کے بعد کیا گیا ہے، جنہوں نے ایران سے دبئی کے راستے بحرین کا سفر کیا تھا۔ خطے کے کئی اور مقامات پر بھی کورونا وائرس میں مبتلا افراد کی تشخیص ہوئی ہے ، جنہوں نے ایران سے ان علاقوں کا سفر کیا تھا۔

ایرانی وزارت صحت کے مطابق ایران میں کورونا سے متاثر پندرہ افراد ہلاک ہوئے ہیں، لیکن ایرانی حکام کی جانب سے حریرچی کی بیماری کی تصدیق نے اس خدشے کو مضبوط کیا ہے کہ ایرانی حکام کورونا وائرس کے پھیلاو کی صورتحال کے حوالے سے مکمل سچائی سے کام نہیں لے رہے۔

ایران کے ایک قدامت پسند رکن پارلیمان نے پر کو الزام عائد کیا تھا کہ ایران کے شہر قم میں اب تک کورونا سے پچاس افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

عالمی ادارہ صحت کے مطابق COVID-19 یعنی کورونا وائرس سے دنیا بھر میں ستائیس ہزار افراد ہلاک جبکہ اسی ہزار متاثر ہو چکے ہیں۔


Source link

اس بارے میں admin

یہ بھی دیکھیں

موسم سرما کے پھلوں کے کیا فوائد ہیں؟

کینو، مالٹے، فروٹر، انار، انگور، سیب، ناشپاتی، امرود اور کیلے یہ تمام وہ پھل ہیں …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *